پٹھان نامہ

By | January 23, 2012
You are visitor No:

caption id=”attachment_986″ align=”aligncenter” width=”541″] Pathan Nama[/caption

12 thoughts on “پٹھان نامہ

  1. ھارون اعظم

    گل نوخیز صاحب، نسلی تعصب کو ہوا نہ دیں۔ پٹھانوں کو آپ لوگ لطیفوں میں گھسیٹتے ہیں، صرف ان کی سادہ لوحی کی وجہ سے۔ ورنہ آپ لوگ بھی فرشتے نہیں کہ آپ کا مذاق نہ اڑایا جاسکے۔ مزاح اور مضحکہ خیزی میں کوئی فرق بھی تو ہوتا ہے۔

    1. Gull Post author

      haroon bhai! shayed aap ki nazar say meri deegar tehreerain nahi guzreen, main to hamesha sab say pehlay khud per mazaq karta hon, hansnay wali baton ko serios mat lain, pathan hamaray bohat pyaray bhai hain, aap agar meri site per “mazahia poetry” wala portion kholain gay to aap ko wahan dosron kay baray main bhi msukurahat bharai poetry milay gi, tasub to tab hota agar main sirf pathano par hi hansta.umeed hai aap bhi sirf muskuraien gay. thx for comments.

  2. Noor

    Please don’t restrict an artist by passing such comments. Take fun as fun and be open minded. It’s a very nice piece of humor and I have read many poems, articles and short stories by Gull Jee and he is right as he has made fun of himself in many of them.

    Well done Sir, this is one of the best poems you have written.

  3. Manan

    sir plz ese 2 3 or pathan name likhe.akhir poetry thi alla hi gia ha sir!!! bs enj hi chuk ke rakho kam!!!

  4. خاالد سہیل ملک

    گل نوخیز اختر صاحب آداب
    پٹھان نامہ ایک دوست کی فیس بک وال پر لکھا دیکھا تھا تب بھی اور اب بھی اچھا نہیں لگا کہ ایک ادیب کہ جس کو لکھنا آتا ہے اور وہ ایک ایسے موضوع پر شعر لکھ رہا ہے کہ جس سے تعصب کی بو آ رہی ہو قطعاً مناسب نہیں بلکہ خود کو ضائع کرنے والی بات بات ہے مزاح نگاری میں جن لوگوں نے نام کمایا ہے وہ تعصب سے پاک رہے ہیں ۔بڑا مزاح نگار وہ ہوتا ہے جو خود پر ہنس سکے ۔خود پر ہنسنا بھی سماج پر ہنسنا ہی ہے ۔۔
    محترم آپ میں بے پناہ ٹیلنٹ ہے اسے ایسی تعصبات کی نذر نہ کریں۔ مزاح نگار کا کام قارئن کو ہنسانا ہے لیکن تھوڑی سے بے پرواہی سے پکھڑ پن سے دامن نہیں بچایا جاسکتا ۔اور پھکڑ پن
    مزاح نگار کا نہیں کسی بھانڈ کا کام ہوسکتا ہے ۔
    کمی بیشی تو ہر نسل کے لوگوں میں ہوتی ہے پٹھانوں میں بھی اور پنجابیوں میں بھی اور سندھی بلوچوں میں بھی
    اس قسم کی شاعری پر ایک پنجابی تو ہنس سکتا ہے لیکن شاید پٹھان کو پڑھ کر دکھ ہوجبکہ آپ کے مداحوں میں پٹھان بھی ہوں گے جس کی ایک مثال میں خود ہوں
    بہرحال لکھتے رہیں

    1. Gull Post author

      Khalid sahib…pathan hamaray bhai hain, pls is tehreer ko sirf mizah kay rang main daikhain, main nay aur bhi logon ki parody ki hai pls usay bhi parhain aur apni muhabaton say nawazian. thx 🙂

  5. imran

    asslam u alikum dear Gul khez brother
    hope doing well in ur life dear gull i read ur column and potery since last two yrs but today i was too much shocked that you have created such a bad concept in my mind that you are creating ethinic circumstances in pakistan. remember if you point our one finger to any one the other four fingers point out your personality. be think
    thnks and good bye

    1. Gull Post author

      Imran bhai…main mazrat khawa hon ke aap ka dil dukha, but ye sab sirf hansanay kay liay hai, main nay to khud pr bhi hamesha qehqahay lagaye hain, ye poem sirf pathano par nahi, is main aur bhi zatain shamil hain, unhain bhi zaror parhiye. aur dil pe lainay ki zarorat nahi, ye koi sach nahi. 🙂 Nokhaiz

  6. imran

    muhteram tumein kuch ziada hi shouq nhe hy dosro pe muskarani k. yad rakhein ye fitrat k usool hy k jo dosro pe hansta hy dunia us pe hansti. i think aqalmand k liye ishara kafi hy.
    okkkkkkk

  7. imran

    my above comeent is just only for Mr manan not for gul no khez.

  8. Fahad

    گل بھائی آپ کی تحریر بہت کمال ہے اور ایسی حس مزاح کسی کسی کو ملتی ہے، آپ اپنا کام جاری رکھیں ، جن کو اعتراض ہے کرنے دیں یا ۲۔۳ غزل پنجابی سندھی بلوچی پہ لکھ کر انہیں ٹھنڈا کر دیں،

Comments are closed.