(اوقات (افسانہ

By | June 25, 2012
You are visitor No:

Auqat

8 thoughts on “(اوقات (افسانہ

  1. umer farooq

    kamanay log jab aroaj patay hn apne hasat ko bool gatay hn ‘;’;;’;”; katnay yah kam zaraf gubaray hn chand punko sa pool jatay hn hahahahah niceeeeeeee

  2. uzma

    nice…. har afsaaney ki story extra-ordinary hai !!!

  3. سید حسنین محسن

    ایک اچھا افسانہ ہے،نام بھی کمال ہے،آپ کے قلم کی روانی کے تو پہلے ہی معترف ہیں ،آپ نے اس افسانے میں ایک زہنی سطع کی بھی بھرپور عکاسی کی ہے ۔

  4. Abdul Basit

    Aik main Nahin Mujh samait sub Pakistaniyon Kee Aadat Hay BHOOL JANA. Hum Log Khud He Sub Kaam Bigartay Hain. Phir bholl jatay hain kay kiya howa thaa. Koun Kiya thaa. aur ab kiya hay. AINA khud bhee dekhna chahiye aur sub ko dekhana chahiye. Zabardast Nokhaiz Bhai.

  5. Tanzeel Ashfaq

    Mohtaram aap ne aik lafz use kia hai دوکان, ye دوکان nahi balk “دکان” hai, is main “و” Izafi hai,
    thanks.

    1. Gull Post author

      شکریہ تنزیل۔ ۔ ۔ آپ نے ٹھیک فرمایا لیکن یہ لفظ دونوں طرح سے رائج ہے ٍ ۔ ۔ ۔ تاہم اس کا وزن دکان ہی ہے ، بہت سے الفاظ اسی طرح اپنی ہیت بدل چکے ہیں جیسے لفظ علیحدہ نھیں علاحدہ ھے لیکن بہت کم اس طرح لکھا جاتا ھے، اردو کی وسعت لفظی کی یہی خوبصورتی ہے ، آپ نے اتنی توجہ سے افسانہ پڑھا، ایک بار پھر آپ کا ممنون ہوں-

Comments are closed.